بهشت ارغوان | حضرت فاطمه زهرا سلام الله علیها

بهشت ارغوان | حضرت فاطمه زهرا سلام الله علیها

+ کپی کردن از مطالب بهشت ارغوان آزاد است. ان شاء الله لبخند حضرت زهرا نصیب همگیمون...

ختم صلوات

ختم صلوات به نیت سلامتی و تعجیل در ظهور امام زمان (عج الله تعالی فرجه الشریف)

طبقه بندی موضوعی

در تا شهدا بخوانید


ایسے میں  نبی  اکرم(ص) کی  بیٹی  نے دو پہلوؤں سے اپنی  جد و جہد شروع کی، ایک طرف اسلامی حقائق  سے  پردہ  اٹھا کر  " ولایت"  کے حقیقی مفہوم و مطالب سے لوگوں کو آشنا بنایا اور ہوشیار و خبردار کیا، دوسری طرف وہ عظیم خطرات جو اسلام اور مسلمانوں کے لئے دہن کھولے کھڑے تھے پوری وضاحت کے ساتھ گوشزد کئے ۔ اس راہ میں، جناب فاطمۂ زہرا(س) نے جو اپنے مقام و مرتبے سے اچھی طرح واقف تھیں، بھرپور فائدہ اٹھایا ۔ چنانچہ بہتر طور پر موضوع کی اہمیت سمجھنے کے لئے فرض کرلیجئے تاریخ اسلام نے دختر رسول کا جو کردار اپنے دامن میں محفوظ رکھا اور دنیا کے سامنے پیش کیا ہے اگر اس طرح سے آپ میدان عملی میں نہ اترتیں گھر پر ہجوم کرنے والوں سے احتجاج نہ کرتیں، پہلو شکستہ نہ ہوتا اور سردربار، مسجد النبی میں جا کر اپنا وہ آتشیں خطبہ نہ دئے ہوتیں اور تمام مردوں اور عورتوں پر حقائق روشن و آشکار نہ فرماتیں تو کیا صورت حال پیش آتی ؟! دراصل علی ابن ابی طالب کی حقانیت و مظلومیت، حتی قریب ترین دوستوں پر بھی تشنۂ تشریح رہ جاتی ۔ بہت سے تاریخی حقائق پردۂ خفاء میں رہ جاتے اور بہت سے چہرے " صحابیت " اور " خطائے اجتہادی " کی مانند اصطلاحات کے اندر گم ہوگئے ہوتے ۔ معصومین علیہم السلام کے علاوہ کون تھا جو ان حقائق کی توضیح و تشریح کرتا ؟! سادہ لوح مورخین و تذکرہ نویس اور درباری محدثین و مفسرین اسلامی حقائق کا چہرہ ہی بدل کر رکھ دیتے ۔ رسول اسلام(ص) کے اہلبیت(ع) اور محافظین قرآن عترت رسول(ص)کے ساتھ جسارتوں کی "تاریخی حدیں" کیسے معین ہوتیں ؟ یہ کام، تنہا اور تنہا حضرت زہرا سلام اللہ علیہا کرسکتی تھیں اور انہوں نے کیا ۔ مسئلہ کا ایک اور رخ یہ بھی ہے کہ اگر ان تاریخی لمحات میں جناب فاطمہ زہرا(س)سکوت اختیار کرلیتیں تو مخالفین ولایت کو اپنے عمل و رفتار کا جواز مل جاتا بلکہ وہ اپنی حکومت صحیح ثابت کرنے کو اور  نبی اکرم(ص)کی نسبت اپنے احترام کے اظہار کے لئے اعلی ترین سطح پر حضرت زہرا(س) کی تعظیم و تکریم کا مظاہرہ کرتے اور ہدیہ ؤ تحائف کے در سیدہ پر انبار لگا دئے جاتے تمام منبروں پر ان کی تعریفیں ہوتیں جیسا کہ انہوں نے ام المومنین عائشہ کے سلسلے میں یہ سب کچھ کیا ہے اور ان کے  "ام المومنیں" ہونے سے بے پناہ فائدہ اٹھایا ہے ۔ اگر آپ اس زاویہ سے دیکھیں تو کہنے پر مجبور ہوجائیں گے کہ رسول اسلام(ص) کی بیٹی نے اسلام اور ولایت کی حفاظت کے لئے  اپنی عزت و وقار اور حرمت و  حیثیت ہر چیز کو قربان کیا ہے اور حفظ دین کے لئے اپنی جان کی قربانی دے کر "ولایت امیرالمومنین" کی  پشتپناہی کی ہے ۔

نظرات  (۰)

هیچ نظری هنوز ثبت نشده است

ارسال نظر

ارسال نظر آزاد است، اما اگر قبلا در بیان ثبت نام کرده اید می توانید ابتدا وارد شوید.
شما میتوانید از این تگهای html استفاده کنید:
<b> یا <strong>، <em> یا <i>، <u>، <strike> یا <s>، <sup>، <sub>، <blockquote>، <code>، <pre>، <hr>، <br>، <p>، <a href="" title="">، <span style="">، <div align="">
تجدید کد امنیتی

خـــانه | درباره مــــا | سرآغاز | لـــوگوهای ما | تمـــاس با من

خواهشمندیم در صورت داشتن وب سایت یا وبلاگ به وب سایت "بهشت ارغوان" قربة الی الله لینک دهید.

کپی کردن از مطالب بهشت ارغوان آزاد است. ان شاء الله لبخند حضرت زهرا نصیب همگیمون

مـــــــــــادر خیلی دوستت دارم